RSS Feed

پتہ بھی نا چلا

Child hurt in suicide bomb
بوٹیاں ہوا میں اُڑ گئیں

اور پتہ بھی نا چلا

ایک زندگی گزر گئی

اور پتہ بھی نا چلا

ایک بھیڑ تھی غبار تھا

جائے وقوع پر

ایک لمحے کی خبر تھی

اور پتہ بھی نا چلا

ایک گونج تھی دھمک تھی

مقام سے کچھ دور تک

بجھے دیئے کی راک تھی

اور پتہ بھی نا چلا

 

 فیصل ارشد

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: